نمبر پی اے بی لیجس (1) 2016ء

بجانب:-   1)      جناب سیکرٹری ،

                                          قومی اسمبلی سیکرٹریٹ ،پارلیمنٹ ہاؤس،

د ۔                     اسللام آبا            

       2)       جناب سیکرٹری،

                                        سینٹ آف پاکستان، پارلیمنٹ ہاؤس ،

اسلام آباد ۔            

عنوان:-             آئینی قرارداد نمبر 97

مورخہ 16 ستمبر 2017 کی اسمبلی نشست میں ذیل متفقہ منظور شدہ آئینی قرار داد نمبر 97 منجانب نواب ثناء اللہ خان زہری ،بلوچستان /انچارج وزیر محکمہ مذہبی امور بین العقائدہم آہنگی بلوچستان برائے اطلاع و ضروری قانون سازی ارسال خدمت ہے:۔

آئینی قرار داد نمبر 97

" یہ ایوان پارلیمنٹ (مجلس شوریٰ) کو اسلامی جمہوریہ پاکستان کے آئین مجریہ 1974 کے آرٹیکل 144 کے تحت اختیار دیتا ہے کہ رویت ہلال سے متعلق ایسی قانون سازی کریں جو صوبہ بلوچستان سمیت پاکستان کے تمام علاقوں میں نافذ العمل ہو"۔

                                                                                                                                                        

                                                                                                                                                                         



                                                                                                                     قرار داد نمبر134

                               مورخہ 20 ستمبر 2017

    نمبر--              ص  ا   ب/س /2/17/2015                                                   

    بخدمت--    جناب چیف سیکرٹری،

                                  حکومت بلوچستان ،کوئٹہ۔

     موضوع--   قرارداد نمبر 134

                              بلوچستان صوبائی اسمبلی کی نشست منعقدہ مورخہ 14 ستمبر 2017 میں منظور شدہ قرارداد نمبر 134 منجانب ،محترمہ ثمینہ خان رکن ،بمر اطلاع و ضروری کارروائی ارسال خدمت ہے۔
                                                                   

                                                          ہر گاہ صوبائی وزراء اراکین اسمبلی اور سرکاری آفیسران کو اکثر سرکاری /نجی دوروں اور علاج و معالجہ کی غرض سے کراچی جانا پڑتا ہے۔جبکہ بلوچستان ہاؤس کراچی میں چار کمرے ہونے کی بنا اس میں رہائش اور ٹرانسپورٹ کے سلسلے میں سخت تکالیف و مشلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ سیکورٹی صورتحال کے پیش نظر وہ مجبورًٍٍٍامہنگے ہوٹلوں میں رہائش اختیار کرتے ہیں جس کا حکومتی خزانے پر بوجھ پڑتا ہے۔

                                                          لہٰذا یہ ایوان صوبائی حکومت سےسفارش کرتا ہے۔ کہ وہ صوبائی وزراء اراکین اسمبلی اور سرکاری آفیسران کو درپیش تکالیف و مشکلات کو مد نظر رکھتے ہوئے فوری بلوچستان ہاؤس اسلام آباد کی طرز پر کراچی میں ایک بڑے بلوچستان ہاؤس کی تعمیر کو یقینی بنائے۔

 

                                                                                                                                                                        

 

                                                                                                                 قرار داد نمبر 139


                                                                                                   مورخہ 20 ستمبر 2017


 نمبر      --          ص ا ب /س/2/ا/2013                   

بخدمت --       جناب چیف سیکرٹری،

                       حکومت بلوچستان ،کوئٹہ۔   

      موضوع--   مشترکہ قرارداد نمبر 139

          بلوچستان صوبائی اسمبلی کی نشست منعقدہ مورخہ 14 ستمبر 2016 میں منظور شدہ مشترکہ قرار داد نمبر 139 منجانب آغا سید لیاقت علی، نصراللہ زیرے، محترمہ سپوژمئی اچکزئی اور محترمہ عارفہ صدیق اراکین اسمبلی ؛ بمراد اطلاع و ضروری کارروائی ارسال خدمت ہے۔

                                                         یہ ایون وفاقی حکومت کی جانب سے پیاز کی درآمد کے فیصلے کی شدید الفاط میں مذمت کرتے ہوئے مطالبہ کرتا ہے کہ چونکہ ہمارے صوبہ کے مختلف علاقوں کی پیاز کی پیداوار حالیہ بہتر ہوئی ہے جس کی مارکیٹ میں قیمتیں بھی اچھی ہے مگر وفاقی حکومت کی جانب سے پیاز کی درآمدگی کا فیصلہ سراسر ہمارے صوبہ کے عوام کا معاشی قتل عام کے مترادف ہے۔ لٰہذا ہمارے صوبہ کے پیاز کی فصل کو یوٹیلٹی اسٹور کے ذریعے مناسب ریٹ پر خریدا جائے اور ساتھ ہی اس کو عام مارکیٹ میں لایا جائے تا کہ ہمارے صوبہ کے زمیندار پیاز کی فصل سے مستفید ہو سکیں۔

                                                         لٰہذا یہ ایوان صوبائی حکومت سے سفارش کرتا ہے کہ وہ وفاقی حکومت سے رجوع کرے کہ صوبہ بلوچستان کے زمینداروں کے مفاد میں پیاز کی درآمدگی کے فیصلے کو روکا جائے تاکہ صوبہ کے زمینداروں میں پائی جانے والی تشویش واحساس محرومی کا خاتمہ ممکین ہو سکے۔